ویب سائٹ دفتر رہبر معظم انقلاب اسلامی

اس شخص کی ذمہ داری جو نماز عصر کے دوران متوجہ ہوجایے کہ ظہر کی

س: جوشخص نمازعصر کے اثناءميں متوجہ ہوجائے کہ اس نے نماز ظہر نہيں پڑھى تو اسکى شرعى ذمہ دارى کيا ہے؟
ج: اگر اس خيال سے نماز عصر ميں مشغول ہو کہ وہ نماز ظہر پڑھ چکا ہے اور پھر نماز کے دوران متوجہ ہو کہ اس نے نماز ظہر نہيں پڑھى اور ہو بھى ظہر و عصرکے مشترکہ وقت ميں تو فوراً اپنى نيت کو نماز ظہر کى طرف پلٹالے اور نماز کو مکمل کرے اور اسکے بعد نماز عصر پڑھے ليکن اگر يہ نماز ظہر کے مخصوص وقت* ميں ہو تو احتياط واجب يہ ہے کہ اپنى نيت کو نماز ظہر کى طرف پلٹالے اور نماز کو مکمل کرے اور اسکے بعد ظہر و عصر کى دونوں نمازوں کو ترتيب کے ساتھ انجام دے اور نماز مغرب و عشاءکے بارے ميں بھى ايسا ہى حکم ہے ۔

* ظہر کا مخصوص وقت اول ظہر سے لے کر اتنا وقت ہے کہ جس ميں نماز پڑھى جاسکے يعنى جس ميں غير مسافر چار رکعتيں اور مسافر دورکعتيںپڑھ سکے۔
 
700 /